عربی گرائمر "مرکب اضافی"

طاہرہ فاطمہ

وفقہ اللہ
رکن
مرکب اضافی:

اس کے دو حصے ہوتے ہیں۔ ایک مضاف اور دوسرا مضاف علیہ۔

مضاف کے لیے قوا‏عد:

  • یہ ہمیشہ پہلے آتا ہے۔
  • اس کا اعراب ہلکا ہوتا ہے۔
  • ا ل داخل نہیں ہو سکتا۔
مضاف الیہ کے قواعد:

یہ ہمیشہ حالت جر میں ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ اس کے لیے اور قاعدہ نہیں ہے۔

مثالیں:

حالت رفع
حالت نصب
حالت جر
عِلْمُ التَّوحِیدِعِلْمَ التَّوحِیدِعِلْمِ التَّوحِیدِ
عِلْمُ الْقَصَصِعِلْمَ الْقَصَصِعِلْمِ الْقَصَصِ
رَبُّ الدَّارِرَبَّ الدَّارِرَبِّ الدَّارِ
رَسُولُ اللہِرَسُولَ اللہِرَسُولِ اللہِ
اُمُّ الْکِتَابِاُمَّ الْکِتَابِاُمِّ الْکِتَابِ
دَلَائِلُ التَّوحِیدِدَلَائِلَ التَّوحِیدِدَلَائِلِ التَّوحِیدِ
عِلْمُ الْاَحْکَامِعِلْمَ الْاَحْکَامِعِلْمِ الْاَحْکَامِ
لَفْظُ الْکُرْسِیِّلَفْظَ الْکُرْسِیِّلَفْظِ الْکُرْسِیِّ
تَحْتُ الْعَرْشِتَحْتَ الْعَرْشِتَحْتِ الْعَرْشِ
عَظْمَتُ اللہِعَظْمَتَ اللہِعَظْمَتِ اللہِ
مَالِكِ يَوْمِ الدِّيْنِ

اِنَّ اللّـٰهَ عَلٰى كُلِّ شَىْءٍ قَدِيْرٌ

فَسَوَّاهُنَّ سَبْعَ سَمَاوَاتٍ

وَاِنَّ مِنْـهَا لَمَا يَهْبِطُ مِنْ خَشْيَةِ اللّـٰهِ

وَقَدْ كَانَ فَرِيْقٌ مِّنْـهُـمْ يَسْـمَعُوْنَ كَلَامَ اللّـٰهِ


مرکب توصیفی:

کسی فرد یا شے کے بارے میں اچھائی، برائی یا وضاحت کو صفت کہتے ہیں۔ اور جس کے بارے میں بیان ہو اسے موصوف کہتے ہیں۔

قواعد:

اس کے قواعد درج ذیل ہیں:

  • صفت عدد میں موصوف کی پیروی کرتی ہے۔ اگر موصوف واحد تو صفت واحد، اگر موصف مثنی تو صفت مثنی اور اگر موصوف جمع تو صفت بھی جمع ہو گی۔
  • صفت جنس میں بھی موصوف کی ہم جنس ہو گی۔ اگر موصوف مذکر تو صفت بھی مذکر اور اگر موصوف مؤنث تو صفت بھی مؤنث ہوگی۔
  • وسعت کے لحاظ سے بھی دونوں میں موافقت ہو گی۔ اگر موصوف نکرہ تو صفت بھی نکرہ اور اگر موصوف معرفہ تو صفت بھی معرفہ۔
  • اعرابی حالتیں بھی صفت اور موصوف کی ایک جیسی ہونگی۔ اگر موصوف حالت رفع میں تو صفت بھی حالت رفع میں، اگر موصوف حالت جر میں تو صفت بھی حالت جر میں اور اگر موصوف حالت نصب میں تو صفت بھی حالت نصب میں ہو گی۔
مثالیں:

حالت رفع
حالت نصب
حالت جر
جِسْمٌ عَظِیْمٌجِسْمًا عَظِیْمًاجِسْمٍ عَظِیْمٍ
اَلسَّماءُ السَّابِعُاَلسَّماءَ السَّابِعَاَلسَّماءِ السَّابِعِ
اَلدَّلَائِلُ الْکَثِیرَۃُاَلدَّلَائِلَ الْکَثِیرَۃَاَلدَّلَائِلِ الْکَثِیرَۃِ
اَلْحِجْرُ الْاَسْوَدُاَلْحِجْرَ الْاَسْوَدَاَلْحِجْرِ الْاَسْوَدِ
اَلْکِتَابُ الْکَرِیْمُاَلْکِتَابَ الْکَرِیْمَاَلْکِتَابِ الْکَرِیْمِ
اَلطَّرِیْقُ الْاَحْسَنُاَلطَّرِیْقَ الْاَحْسَنَاَلطَّرِیْقِ الْاَحْسَنِ
اَلنَّوعُ الْوَاحِدُاَلنَّوعَ الْوَاحِدَاَلنَّوعِ الْوَاحِدِ
بَلَدٌ اُخْرٌبَلَدًا اُخْرًابَلَدٍ اُخْرٍ
طَعَامٌ لَذِیْذٌطَعَامًا لَذِیْذًاطَعَامٍ لَذِیْذٍ
اَلْاَخْبَارُ الصَّحِیْحَۃُاَلْاَخْبَارَ الصَّحِیْحَۃَاَلْاَخْبَارِ الصَّحِیْحَۃِ
اِهْدِنَا الصِّرَاطَ الْمُسْتَقِـيْـمَ

وَّلَـهُـمْ عَذَابٌ عَظِـيْمٌ

اٰمَنَّا بِاللّـٰهِ وَبِالْيَوْمِ الْاٰخِرِ

وَقَالُوْا لَنْ تَمَسَّنَا النَّارُ اِلَّآ اَيَّامًا مَّعْدُوْدَةً


اُولٰٓئِكَ الَّـذِيْنَ اشْتَـرَوُا الْحَيَاةَ الـدُّنْيَا بِالْاٰخِرَةِ
 
Top